دونمبری میں ہمارا معاشرہ کیسے گھرا ہے - NEWFORU™ - Official Site | Learn About Insurance Policy And Finance

Breaking

 ❤ Welcome To Our Site ❤ For More Information Please Subscribe Our You Tube Channel 

Wednesday, 6 May 2020

دونمبری میں ہمارا معاشرہ کیسے گھرا ہے

میرا نام فیضان مجید ہے میں اس تحریر میں آپکو بتاؤں گا کہ ہمارے معشرے میں دونمبری کیسے ہوتی ہے۔۔۔

ﻭﮦ ﺍﯾﮏ ﺳﺮﮐﺎﺭﯼ ﺩﻓﺘﺮ ﻣﯿﮟ ﻣﻼﺯﻡ ﺗﮭﺎ، ﺁﺝ ﺻﺒﺢ ﺟﺐ ﺳﺒﺰﯼ ﻟﮯ ﮐﺮ ﻭﮦ ﮔﮭﺮ ﺟﺎ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﺗﻮ ﺍﯾﮏ ﺍﻭﺭ ﺳﺒﺰﯼ ﻭﺍﻟﮯ ﺳﮯ ﺩﺍﻡ ﭘﻮﭼﮭﻨﮯ ﭘﺮ پتہ ﭼﻼ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺗﻮ ﺳﺒﺰﯼ ﻣﮩﻨﮕﮯ ﺩﺍﻣﻮﮞ ﺧﺮﯾﺪ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ۔ ﺧﯿﺮ ﮔﮭﺮ ﭘﮩﻨﭽﺎ ﺳﺒﺰﯼ ﻧﮑﺎﻟﯽ ﺗﻮ پتہ ﭼﻼ ﮐﮧ ﺩﻭﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﻧﮯ ﺁﺩﮬﯽ ﺳﺒﺰﯼ ﺗﻮ ﮔﻠﯽ ﺳﮍﯼ ﮈﺍﻝ ﺩﯼ ﮨﮯ۔ ﻭﮦ ﺳﺨﺖ ﻏﺼﮯ ﮐﮯ ﻋﺎﻟﻢ ﻣﯿﮟ ﺗﯿﺎﺭ ﮨﻮ ﮐﺮ ﺩﻓﺘﺮ ﭘﮩﻨﭽﺎ،





 ﺗﻮ دفتر میں اس کے پاس ﺍﯾﮏ ﭨﮭﮑﯿﺪﺍﺭ ﺍﭘﻨﺎ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﻞ ﭨﮭﯿﮏ ﮐﺮﻭﺍﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺁ ﮔﯿﺎ، ﻭﮦ ﺷﺨﺺ ﺳﺒﺰﯼ ﻭﺍﻟﮯ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﮨﯽ ﻏﺼﮯ ﻣﯿﮟ ﺑﯿﭩﮭﺎ ﺗﮭﺎ، ﭨﮭﯿﮑﺪﺍﺭ ﺳﮯ ﺑﻮﻻ ﺗﻤﮭﺎﺭﺍ ﺑﻞ ﭨﮭﯿﮏ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﻮ ﺳﮑﺘﺎ۔ ﭨﮭﯿﮑﺪﺍﺭ ﻧﮯ ﺭﺷﻮﺕ ﮐﯽ ﭘﯿﺸﮑﺶ ﮐﯽ ﺗﻮ ﻭﮦ ﺳﻮﭼﻨﮯ ﻟﮕﺎ ﮐﮧ ﺍﮔﺮ ﺳﺒﺰﯼ ﻭﺍﻻ ﺩﻭ ﻧﻤﺒﺮﯼ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ ﺗﻮ ﻣﯿﮟ ﮐﯿﻮﮞ ﻧﮩﯿﮟ۔ ﭼﻨﺎﭼﮧ ﺍُﺱ ﻧﮯ ﭘﯿﺴﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﻭﺭ ﺑﻞ ﭨﮭﯿﮏ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ۔

 ﻭﮦ ﭨﮭﮑﯿﺪﺍﺭ ﺭﺷﻮﺕ ﺩﮮ ﮐﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﺁﻓﺲ ﭘﮩﻨﭽﺎ ﻭﮦ ﺍِﻥ ﺩﻧﻮﮞ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﯾﮏ ﮐﻼﺋﻨﭧ ﮐﺎ ﮔﮭﺮ ﺗﻌﻤﯿﺮ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﺗﮭﺎ ﺍُﺱ ﻧﮯ ﮐﻼﺋﻨﭧ ﮐﻮ ﮐﺎﻝ ﮐﯽ ﺍﻭﺭ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﺳﯿﻤﻨﭧ ﺍﻭﺭ ﺳﺮﯾﺎ ﮐﻢ ﭘﮍ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ ﻣﺰﯾﺪ ﭘﯿﺴﮯ ﮐﯽ ﺿﺮﻭﺭﺕ ﮨﮯ، ﺣﺎﻻﻧﮑﮧ ﺳﯿﻤﻨﭧ ﺍﻭﺭ ﺳﺮﯾﺎ ﭘﮩﻠﮯ ﮨﯽ ﻣﻨﺎﺳﺐ ﻣﻘﺪﺍﺭ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺗﮭﺎ۔ ﺍُﺱ ﮐﺎ ﮐﻼﺋﻨﭧ ﺟﻮ ﺍﯾﮏ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﺗﮭﺎ ﻭﮦ ﺳﻤﺠﮫ ﮔﯿﺎ ﮐﮧ ﭨﮭﮑﯿﺪﺍﺭ ﺩﻭ ﻧﻤﺒﺮﯼ ﮐﺮ ﺭﮨﺎ ﮨﮯ، ﻟﯿﮑﻦ ﻭﮦ ﮐﯿﺎ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﺎ ﺗﮭﺎ، ﺍُﺱ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺍﺗﻨﺎ ﭨﺎﺋﻢ ﻧﮩﯿﮟ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﺎ ﮐﻠﯿﻨﮏ ﺑﮭﯽ ﭼﻼﺋﮯ ﺍﻭﺭ ﮐﻨﭩﺮﮐﺸﻦ ﮐﺎ ﮐﺎﻡ ﺑﮭﯽ ﺩﯾﮑﮭﮯ ﻟﮩﺬﺍ ﺍُﺱ ﻧﮯ ﭘﯿﺴﮯ ﺑﮭﺠﻮﺍ ﺩﯾﺌﮯ۔

 ﺍﺗﻨﮯ ﻣﯿﮟ ﺍُﺱ ﮐﮯ ﮐﻠﯿﻨﮏ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﻣﺮﯾﺾ ﺁﯾﺎ ﺟﺴﮯ ﺻﺮﻑ ﮐﮭﺎﻧﺴﯽ ﮐﯽ ﺷﮑﺎﯾﺖ ﺗﮭﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻧﮯ ﺍُﺳﮯ ﮐﺌﯽ ﻃﺮﺡ ﮐﮯ ﭨﯿﺴﭧ ﻟﮑﮫ ﺩﯾﺌﮯ ﺍﺱ ﮨﺪﺍﯾﺖ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﮐﮯ ﯾﮧ ﭨﯿﺴﭧ ﮐﺮﻭﺍﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﺍُﺳﯽ ﮐﯽ ﻟﯿﺒﺎﺭﭨﺮﯼ ﺳﮯ ﮨﯿﮟ.
ﻭﮦ بیچارہ ﻣﺮﯾﺾ ﮐﺌﯽ ﮨﺰﺍﺭ ﺭﻭﭘﮯ ﺧﺮﭺ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺁﺧﺮ ﻣﯿﮟ ﮐﮭﺎﻧﺴﯽ ﮐﺎ ﺷﺮﺑﺖ ﻟﮯ ﮐﺮ ﮔﮭﺮ ﭼﻼ ﺁﯾﺎ۔

 ﮔﮭﺮ ﺟﺎﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻭﮦ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﮐﻮ ﮐﻮﺳﺘﺎ ﺭﮨﺎ ﺍُﺳﮯ پتہ ﺗﮭﺎ کہ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﻧﮯ ﻣﺎﻝ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﺌﮯ ﺍﺗﻨﮯ ﭨﯿﺴﭧ ﻟﮑﮫ ﮐﺮ ﺩﯾﺌﮯ ﺗﮭﮯ۔
ﺍُﺱ ﮐﮯ ﮔﮭﺮ ﮐﮯ ﻧﯿﭽﮯ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﮐﺎﻥ ﺗﮭﯽ ﺟﻮ ﺍُﺱ ﻧﮯ ﮐﺮﺍﺋﮯ ﭘﺮ ﺩﮮ ﺭﮐﮭﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﮔﮭﺮ ﻣﯿﮟ ﺩﺍﺧﻞ ﮨﻮﻧﮯ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﻭﮦ ﺩﻭﮐﺎﻥ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺭُﮐﺎ ﺍﻭﺭ ﺩﻭﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﮐﻮ ﮐﮩﺎ ﺍﮔﻠﮯ مہینے ﺳﮯ ﮐﺮﺍﯾﮧ ﺑﮍﮪ ﺟﺎﺋﮯ ﮔﺎ، ﻣﮩﻨﮕﺎﺋﯽ ﺑﮩﺖ ﺑﮍﮪ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﺩﻭﮐﺎﻧﺪﺍﺭ ﻭﮨﯽ ﺳﺒﺰﯼ ﻭﺍﻻ ﺗﮭﺎ۔

 اب دیکھیں وہی کہاوت ہے کہ کر بھلا ہو بھلا ۔جب ہم کسی انسان کا بھلا سوچیں گے اسکے ساتھ اچھا کریں گے تو وہ بھی ہمارے ساتھ اچھا ہی کرے گا اور اس طرح اللہ بھی خوش ہوگا ۔ اگر ہمیں معاشرہ بہتر بنانا ہے تو خود اچھا ہونا پڑے گا۔

امید کرتا ہوں آپکو میری تحریر پسند آئ ہو گی لہذا اسکو شئر کریں
شکریا!

1 comment: